Connect with people

The world is a book.Those who do not connect, miss many pages.
Invite

Browse Members

  • Faizan Asim چیف جسٹس ثاقب نثار نے آسیہ بی بی کو بری کرنے کی جو وجوہات تحریر کی ہیں وہ یہ ہیں۔ 1- وقوعہ 14 جون 2009 کو پیش آیا لیکن اس کی ایف آئی آر پانچ دن بعد 19 جون کو درج کی گئی جس کی وجہ سے مقدمہ کمزور ہو گیا۔ 2- اس مقدمے میں عینی شاہد معافیہ بی بی اور اسما بی بی ہیں جنہوں نے گواہی دی کہ آسیہ بی بی نے ان کے سامنے توہین آمیز الفاظ ادا کیے۔ اس موقع پر 25 سے 35 کے درمیان خواتین موجود تھیں لیکن ان میں سے کوئی بھی گواہی دینے نہیں آیا۔ 3- دونوں خواتین گواہوں نے کہا کہ آسیہ بی بی کے ساتھ ان کا پانی پلانے پر کوئی جھگڑا نہیں ہوا تھا جبکہ دیگر گواہوں نے تسلیم کیا کہ یہ جھگڑا ہوا تھا۔ 4- سب سے اہم بات یہ تھی مختلف گواہوں کے بیانات میں فرق تھا۔ جب آسیہ بی بی کا معاملہ پھیلا تو ایک عوامی اجتماع بلایا گیا جہاں آسیہ بی بی سے اقرار جرم کرایا گیا۔ یاد رہے کہ اسی اقرار جرم پر ہی ابتدائی عدالت نے ملزمہ کو موت کی سزا سنائی تھی۔ اس لیے یہ اجتماع بنیادی اہمیت رکھتا ہے۔ ایک گواہ نے کہا کہ اس اجتماع میں 100 افراد شریک تھے، دوسرے نے کہا کہ اس میں 1000 افراد شریک تھے، تیسرے گواہ نے یہ تعداد 2000 بتائی جبکہ چوتھے نے 200 سے 250 کے اعدادوشمار دیے۔ ان بیانات کے فرق کی وجہ سے شکوک پیدا ہوئے اور دنیا کے ہر قانون کے مطابق شک کا فائدہ ملزم کو ملتا ہے۔ 5- اس عوامی اجتماع کے بارے میں ایک گواہ نے کہا کہ یہ اجتماع مختاراحمد کے گھر منعقد ہوا تھا۔ دوسرے نے کہا کہ یہ عبدالستار کے گھر ہوا تھا، تیسرے نے کہا کہ اجتماع رانا رزاق کے گھر ہوا تھا جبکہ چوتھے گواہ کا بیان ہے کہ اجتماع حاجی علی احمد کے ڈیرے پر منعقد ہوا تھا۔ 6- اجتماع میں آسیہ بی بی کو لانے کے حوالے سے بھی گواہوں کے بیانات میں تضاد تھا۔ ایک نے کہا کہ اسے یاد نہیں کہ ملزمہ کو کون لایا تھا، دوسرے نے کہا کہ وہ پیدل چل کر آئی تھی، تیسرے نے کہا کہ اسے موٹر سائیکل پر لایا گیا تھا۔ 7- اس اجتماع کے وقت اور دورانیے کے بارے میں بھی گواہوں کے بیانات میں اختلاف تھا۔ 8- ملزمہ کی گرفتاری کے وقت کے متعلق سب انسپکڑ محمد ارشد کے بیانات میں تضاد پایا گیا۔ 9- ملزمہ سے اعتراف جرم ایک ایسے مجمع کے سامنے کرایا گیا جس میں سینکڑوں لوگ شامل تھے اور جو اسے مارنے پر تلے ہوئے تھے۔ اس کی کوئی قانونی حیثیت نہیں تھی۔ اسے نہ ہی رضاکارانہ بیان قرار دیا جا سکتا ہے اور نہ ہی قانون کے مطابق سزائے موت جیسی انتہائی سزا کے لیے ایسا بیان قابل قبول ہو سکتا ہے۔ 10- آسیہ بی بی نے قانون کے تحت جو بیان دیا اس میں انہوں نے حضور پاک ﷺ اور قرآن پاک کی مکمل تعظیم کا اظہار کیا اور کہا کہ وہ تفتیشی افسر کے سامنے بائبل پر حلف اٹھانے کو تیار ہے تاکہ اپنی معصومیت ثابت کر سکے لیکن تفتیشی افسر نے ایسا کرنے کی اجازت نہیں دی۔ یہ اب وکلا حضرات ہی بتا سکتے ہیں کہ ان دلائل کی اہمیت کیا ہے۔
    Nov 1

  • Hadiya Imran Name: Hadiya Imran BS Media Studies CMS number: 25113 Subject: Analysis on Editorials of Dawn Newspaper The current issues which have been highlighted in the editorial section were: 1) Citizenship promise. 2) Muharram precautions. 3) Human rights and mental health. Good citizenship is very important in creating a functional society.If citizenship is executed with care and taking all communties along, it could alleviate the suffering and uncertainity of many. Prime minister, Imran khan has recently turned his attention to the Afghan refugees and Bengalis who are living in our homeland for more than four decades. All those who dewell in this country should have a life of respect and dignity so Imran khan decided to positively transform the lives of many residents of the country by granting them citizenship. Granting citizenship to those eligible seems to be a logical next step both legally and morally. This move is an important first step in ending the discrimination faced by refugee and migrant communities. Muharram is well-known because of its historical significance and mourning for the murder of Hussain ibn Ali (R.A). Traditionally, the majalis and mourning processions on Muharram 8, 9 and 10 see the biggest turnout in people. Ashura Muharram is equally important for all Muslims and all must play a role to ensure peace during the holy month. A few tested steps can help ensure that the mourning period passes by off smoothly. Special attention needs to be given to the security of mosques, imambargahs and processions during the holy month to maintain peace and harmony. We are facing a global human rights emergency in mental health. All over the world people with mental disabilities experience a wide range of human rights violations. In Pakistan, psychiatrists are few and far between and are considered urban clusters. Violations often occur behind closed doors and go unreported. Many people with mental disabilities are assumed to have no capacity to make decisions for themselves and are therefore being detained. There is this widespread stigma that leads to misconceptions that people with mental disorders cannot be trusted. This issue should not be neglected. Nationwide compaigns can create awareness among people. It is very important to provide proper treatment to mentally ill people. It is their foremost right.
    Sep 20